ڈھب ہیں تیرے سے باغ میں گل کے

ڈھب ہیں تیرے سے باغ میں گل کے

بو گئی کچھ دماغ میں گل کے

جائے روغن دیا کرے ہے عشق

خون بلبل چراغ میں گل کے

دل تسلی نہیں صبا ورنہ

جلوے سب ہیں گے داغ میں گل کے

اس حدیقے کے عیش پر مت جا

مے نہیں ہے ایاغ میں گل کے

سیر کر میرؔ اس چمن کی شتاب

ہے خزاں بھی سراغ میں گل کے

اسی کے متعلق مزید شعر

Copyright 2020 | Anzik Writers