ہر حرف ہے سرمستی، ہر بات ہے رندانہ

ہر حرف ہے سرمستی، ہر بات ہے رندانہ
چھائی ہے مرے دل پر وہ نرگسِ مستانہ

وہ اشک بہے غم میں یہ جاں ہوئی غرقِ خوں
لبریز ہوا آخر یوں عمر کا پیمانہ

آ ڈال مرے دل میں زلفوں کے یہ پیچ و خم
آشفتہ سروں کا ہے آباد سیہ خانہ

واللہ کشش کیا تھی مستی بھری آنکھوں کی
یہ راہ چلا خسرو رندانہ و مستانہ

اسی کے متعلق مزید شعر

Copyright 2020 | Anzik Writers