پل پل کانٹا سا چبھتا تھا

پل پل کانٹا سا چبھتا تھا
یہ ملنا بھی کیا ملنا تھا

یہ کانٹے اور تیرا دامن
میں اپنا دکھ بھول گیا تھا

کتنی باتیں کی تھیں لیکن
ایک بات سے جی ڈرتا تھا

تیرے ہاتھ کی چائے تو پی تھی
دل کا رنج تو دل میں رہا تھا

کسی پرانے وہم نے شاید
تجھ کو پھر بے چین کیا تھا

میں بھی مسافر تجھ کو بھی جلدی
گاڑی کا بھی وقت ہوا تھا

اک اجڑے سے اسٹیشن پر
تو نے مجھ کو چھوڑ دیا تھا

اسی کے متعلق مزید شعر

Copyright 2020 | Anzik Writers