میری دہلیز پہ وہ کیوں ہیں کھڑے

میری دہلیز پہ وہ کیوں ہیں کھڑے

پوچھو تو سہی کون سے غم یاد آگئے

لگتا ہے بہت ٹھوکریں کھالی زمانے کی

اسی لیۓ تو انکو آج ہم یاد آگئے

مجھکو زخم دینے والا زخمی ہے نادان

انکو دیکھتے ہی ہمکو اہنے زخم یاد آگئے

انکی آنکھ میں نمی اور ہماری آہ سرد

ہم کو پھر سے اپنےرخسار نم یاد آگئے

پوچھ رہے ہیں ہم یہ دل سے انمول

کیا ہواہے ؟ کیونکر انکو تم یاد آگئے

اسی کے متعلق مزید شعر

Copyright 2020 | Anzik Writers