مکھن سے بال

ایک دن ایک بادشاہ نے درباری بڑھئی سے کہا کہ میں تجھے کل پھانسی دے دوں گا‘بڑھئی بیچارہ اس رات سو نہیں پا رہا تھا۔اس کی بیوی نے کہا‘ ہر رات کی طرح سوئیے کہ آپ کا پروردگار ایک ہے مگر مشکل سے نکلنے کے راستے بہت سے ہیں۔بیوی کی بات اس کے دل میں سکون و اطمینان پیدا کیا۔ آنکھیں بند ہونے لگیں اور وہ سو گیا۔

صبح سویرے سپاہیوں کے پیروں کی آواز سنی تو اس کے چہرے کا رنگ اڑ گیا۔ مایوسی اور پشیمانی سے بیوی کو دیکھا‘ کانپتے ہاتھوں سے دروازہ کھول کر دونوں ہاتھوں کو آگے بڑھا دیا کہ سپاہی اسے ہتھکڑی پہنا دیں‘ دو سپاہیوں نے تعجب سے کہا:بادشاہ مر گیا ہے۔

ہم اس لئے آئے ہیں کہ بادشاہ کےلئے تابوت بنا دو‘بڑھئی کے بدن میں خوشی کی لہر دوڑ گئی‘ معذرت خواہی کے طور پر بیوی پر ایک نظر ڈالی‘ بیوی مسکرائی اور بولی:ہر رات کی طرح سکون سے سووں کہ پروردگار ایک ہے اور مشکلات سے نجات کے دروازے بہت سارے ہیں۔زیادہ فکر مندی انسان کو تھکا دیتی ہے جبکہ پروردگار عالم مالک اور سارے امور کی تدبیر کرنے والا ہے‘زیادہ فکرمندی سے بچیں‘ اپنے رب پر کامل بھروسہ رکھیں‘ جب اس پر بھروسہ رکھیں گے تو زندگی میں کبھی پرپشیمانی نہیں ہوںگے‘ وہ ہر مشکل سے آپ کو ایسے نکال لے گا جیسے مکھن سے بال۔

 

اسی کے متعلق مزید شعر

Copyright 2020 | Anzik Writers