وہ نہتا نہیں اکیلا ہے

وہ نہتا نہیں اکیلا ہے معرکہ اب برابری کا ہے اپنی آنکھیں بچا کے رکھنا تم اس گلی روشنی زیادہ ہے اتنی راس آ گئی ہے تنہائی خود سے ملنا بھی اب اکھرتا ہے آج کے دن جدا ہوا تھا وہ آج کا دن پہاڑ جیسا ہے خود کو کب تک سمیٹنا ہوگا اس نے […]

 مزید پڑھیں

کئی سمتوں میں رستہ بٹ رہا ہے

کئی سمتوں میں رستہ بٹ رہا ہے مسافر سوچ میں ڈوبا ہوا ہے یہ ممکن ہے کہ اس سے ہار جاؤں مری ہی طرح سے وہ سوچتا ہے نظر انداز کیوں کرتے ہو اس کو بدن بھی عشق میں اک مرحلہ ہے جدائی لفظ سے بھی کانپتے ہیں تعلق اتنا گہرا ہو گیا ہے

 مزید پڑھیں

میں نے تُم کو سُنا

میں نے تُم کو سُنا جیسے پانی مُنکشف ہوتا ہے جیسے زمین، مجذوب سی سرشاری میں لپٹی ہوئی اپنی پیاس کو گلے لگاتی ہے میں نے تُم کو سُنا اور میری سماعت جاگ گئی جیسے بارش کی بوندیں پڑنے کے بعد مٹّی کی سوئی ہوئی خوشبو بیدار ہوتی ہے میں نے تُم کو سُنا جیسے […]

 مزید پڑھیں

اپنی بے صدا خواہشوں کا لشکر لیکر

اپنی بے صدا خواہشوں کا لشکر لیکر کل تم غباروں کو لپیٹتے ہوئے میری آنکھوں میں ہو کر گزری تھی نہ صاحب سلامت کی نہ میری طرف دیکھا میں درد کا میٹھا نغمہ بن کر بہنا چاہتا تھا کہ تمہارے نقش ہائے کفِ پاء سے اٹھتے ہوئے لحنِ سرود نے مجھے اپنی آغوش میں لیا […]

 مزید پڑھیں

ساحلوں پر اداسی رہی

ساحلوں پر اداسی رہی اک ندی پھر سے پیاسی رہی رات نے نیند پہنی مگر خواب کی بے لباسی رہی حسن وہ کھلکھلاتا رہا عشق پر بد حواسی سی رہی آج پھر کچھ نہ کہہ پیے ہم آج پھر بات باسی رہی کم نہ ہو لمس کی آنچ یہ برف بس اب ذرا سی رہی […]

 مزید پڑھیں

حسن کافر تھا ادا قاتل تھی باتیں سحر تھیں

حسن کافر تھا ادا قاتل تھی باتیں سحر تھیں اور تو سب کچھ تھا لیکن رسم دل داری نہ تھی

 مزید پڑھیں

لوگ مانگے کے اجالے سے ہیں ایسے مرعوب

لوگ مانگے کے اجالے سے ہیں ایسے مرعوب روشنی اپنے چراغوں کی بری لگتی ہے

 مزید پڑھیں

ساحل کے سکوں سے کسے انکار ہے لیکن

ساحل کے سکوں سے کسے انکار ہے لیکن طوفان سے لڑنے میں مزا اور ہی کچھ ہے

 مزید پڑھیں

In Shokh Hasinon Ki Ada Aur Hi Kuchh Hai

In Shokh Hasinon Ki Ada Aur Hi Kuchh Hai Aur Inki Adaon Men Maza Aur Hi Kuchh Hai Ye Dil Hai Magar Dil Men Basa Aur Hi Kuchh Hai Kah Do Mujhe Kya Tumne Suna Aur Hi Kuchh Hai Dil Aaina Hai Jalwa-Numa Aur Hi Kuchh Hai Kuchh Aur Hi Samjhe The Hua Aur Hi […]

 مزید پڑھیں

کوئی عشق میں مجھ سے افزوں نہ نکلا

کوئی عشق میں مجھ سے افزوں نہ نکلا کبھی سامنے ہو کے مجنوں نہ نکلا بڑا شور سنتے تھے پہلو میں دل کا جو چیرا تو اک قطرہ خوں نہ نکلا بجا کہتے آئے ہیں ہیچ اس کو شاعر کمر کا کوئی ہم سے مضموں نہ نکلا ہوا کون سا روز روشن نہ کالا کب […]

 مزید پڑھیں
1 2 3 5
Copyright 2020 | Anzik Writers